لاہور :سینئر تجزیہ کار عبدالقیوم صدیقی نے نجی ٹی وی پروگرام سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ جب سپریم کورٹ نے ڈاکٹر شاہد مسعود کو طلب کیا تو چیف جسٹس کی جانب سے باقاعدہ طور پر شاہد مسعود کو کہا گیا کہ آپ کو علم ہے کہ اگر معلومات غلط ہوں تو اس کے کیا نتائج ہو سکتے ہیں جس میں ڈاکٹر شاہد مسعود نے کہا کہ مجھے علم ہے اور میں انتہائی ذمہ داری کے ساتھ یہ بات کر رہا ہوں کہ ملزم عمران علی کے بینک اکاؤنٹس موجود ہیں اور اس کی وفاقی وزیر کی جانب سے پشت پناہی بھی ہو رہی ہے جس پر عدالت کی جانب سے انہیں کہا گیا کہ ہم اس کی مرحلہ وار تحقیقات بھی کروائیں گے ۔
انہوں نے مزید کہا کہ اعلی ترین عدلیہ اور چیف جسٹس کو جب غلط معلومات فراہم کی جائیں گی یا معاشرے میں بے چینی پیدا کی جاتی ہے تو ہمارے قانون کے مطابق اس شخص کو عدالت بغیر کسی ٹرائل کے سیدھے عدالت بھیج سکتی ہے ۔ مزید دیکھنے کے لئے ویڈیو ملاحظہ کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں