پشاور: خیبرپختونخوا کے12اضلاع میں 222 بچوں کوزیادتی اور257 بچوں کوجسمانی تشدد کا نشانہ بنایا گیا،جنسی تشدد کے واقعات گزشتہ 6 سال میں ہوئے،مردان میں 35 بچوں کے ساتھ زیادتی کے واقعات ہوئے،۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق تشدد کا شکار بچوں سے متعلق چائلڈ پروٹیکشن اینڈ ویلفیئر کمیشن نے رپورٹ جاری کردی۔ صوبے کے چائلڈ پروٹیکشن یونٹس نےاعداد وشمار جمع کیےہیں۔
رپورٹ کے مطابق خیبرپختونخوا کے 12اضلاع میں 257 بچوں کوجسمانی تشدد کا نشانہ بنایا گیا ہے۔ جبکہ خیبرپختونخوا کے 12 اضلاع میں 222 بچےزیادتی کا نشانہ بنے۔بچوں سےزیادتی کےسب سےزیادہ 38 واقعات ایبٹ آباد میں ہوئے۔صوابی میں 37 اور چارسدہ میں 30 بچوں کو زیادتی کا نشانہ بنایا گیا۔ چترال،بٹگرام میں زیادتی کے 8، 8، لوئر دیر،بونیر میں زیادتی کے9، 9 واقعات ہوئے۔کوہاٹ میں 7، بنوں 10 اور سوات میں 19 بچےزیادتی کا نشانہ بنے۔ پشاور میں گزشتہ 6سال کےدوران 12 بچوں کو زیادتی کا نشانہ بنایا گیا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں