اسلام آباد:سپریم کورٹ نے گیارہ سالہ بچی کو زیادتی کے بعد قتل کرنے والے ملزم کو عدم شواہد کی بنا پر بری کردیا۔ جمعرات کو تربت میں زیادتی کے بعد قتل ہونے والی 11 سالہ بچی نعلین کے ملزم کو سپریم کورٹ نے عدم شواہد کی بنا پر بری کرتے ہوئے اپنے فیصلے میں قرار دیا کہ متاثرہ بچی کا طبی معائنہ ہی نہیں کروایا گیا، طبی معائنے کے بغیر زیادتی ہونا ثابت نہیں ہو سکتا، بچی کا پوسٹ مارٹم بھی قبر کشائی کے بعد کیا گیا،واقعے کا کوئی چشم دید گواہ ہے نہ بچی کو ملزم کے ساتھ جاتے دیکھا گیا، ٹھوس شواہد کے بغیر کسی کو سزا نہیں دی جا سکتی، قتل کیسے ہوا ٹرائل کورٹ میں کوئی چیز ثابت نہیں کی گئی، لہذا عدم شواہد کی بنا پر ملزم کو بری کیا جاتا ہے۔
واضح رہے کہ 11 سالہ نعلین کو16 جون 2012 میں زیادتی کے بعد قتل کردیاگیا تھا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں