لاہور:ڈی آئی جی ابو بکر خد بخش نے زینب قتل کیس قائمہ کمیٹی برائے داخلہ کو بریفنگ دیتے ہوئے کہا ہے کہ بچیوں سے زیادتی کرنے کے بعد قتل کرنے والا مجرم ایک ہی ہے۔تفصیلات کے مطابق سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے داخلہ کا اجلاس سینیٹر رحمان ملک کی زیر صدارت ہوا جس میں مقتولہ زینب کے والد محمد امین اور پنجاب پولیس کے ڈی آئی جی ابو بکر خدا بخش بھی شریک ہوئے۔
ڈی آئی جی ابو بکر خدا بخش نے کمیٹی کو بتایا کہ بچی کی لاش ایک پولیس کانسٹیبل صابر حسین نے ہی تلاش کی، سال 2015 سے اب تک ایسے 11 واقعات ہوئے ہیں۔ اکتوبر2017 سے اب تک 696 ڈی این اے لیے گئے 692 لوگوں سے تحقیقات کیں ہمیں 125 ڈی این ایز کے رزلٹ کا انتظار ہے۔ان کا مزید کہنا تھا کہ 6بچیوں کو زیادتی کا نشانہ بنانے کے بعد قتل کرنے والا ایک ہی مجرم ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں