دبئی: متحدہ عرب امارات کے رہائشی اور امیگریشن ڈیپارٹمنٹ سے ایک غیرملکی بھارتی شہری نے پوچھا کہ مجھے متحدہ عرب امارات کی ریاست عجمان سے انڈیا 2012 میں ملک بدر کیا گیا تھا اور اب میں اور میری فیملی پھر سے متحدہ عرب امارات میں رہائش اختیار کرنا چاہ رہے ہیں تو کیا میں دوبارہ اپنی فیملی کے ساتھ متحدہ عرب امارات میں رہائش پذیر ہو سکتا ہوں یا پھر ایک دفعہ ملک بدر ہونے پر ریاست میں یاحیات جانے پر پابندی ہے؟ اس سوال کے جواب میں متعلقہ ادارے نے بتایا کہ اگر کوئی شخص ایک دفعہ ریاست سے ملک بدر کر دیا گیا ہو تو وہ دوبارہ ریاست میں داخل نہیں ہو سکتا۔
یہ بات متحدہ عرب امارات کے 1973 کے رہائشی اور امیگریشن قانون کے آرٹیکل نمبر 28 کے وفاقی قانون نمبر 6 میں صاف صاف لکھی ہوئی ہے۔ جس کے مطابق اگر کوئی غیرملکی ریاست سے ملک بدر کر دیا گیا ہو تو وہ ریاست میں ساری زندگی داخل نہیں ہو سکتا ماسوائے اسکے کہ اسنے وزارت داخلہ سے خاص اجازت حاصل کر لی ہو۔ اس آرٹیکل کے علاوہ ملک بدر کیا جانے والا شخص ریاست میں دوبارہ داخلے کے لیے رہائشی اورغیرملکی معاملات کے ڈایکٹر جنرل سے رجوع کر سکتا ہے اور انکو اس پر لگی پابندی کو ہٹائے جانے کی درخواست جمع کرا سکتا ہے اسکے علاوہ اس مسئلے کا دوسرا کوئی حل نہیں ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں