اسلام آباد:ماہر قانون اور ایڈووکیٹ سپریم کورٹ عارف چوہدری نے کہا ہے کہ سابق وزیراعظم نواز شریف کی نااہلی سے متعلق دائر نظر ثانی درخواست کا فیصلے آنے کے بعد ان کی صاحبزادی مریم صفدرکی جانب سے سخت درعمل کا آنا کرنا بظاہر توہین عدالت ہے۔نجی ٹی وی کے پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے ایڈووکیٹ عارف چوہدری نے کہا کہ نواز شریف اور ان کی صاحبزادی مریم صفدر کے اندازِگفتگو سے ایسا محسوس ہوتا ہے کہ ایک دکاندار اقتدار میں رہا اور اس نے وزارتِ عظمیٰ کو دکانداری کی طرح ہی چلایا۔
انہوں نے کہا کہ اگر کوئی شخص ملک میں حکمرانی کرچکا ہو اور پھر وہ یہ کہے کہ مجھے 5 ججوں نے نکال دیا تو اس بات سے واضح ہوجاتا ہے کہ اس شخص نے ملک کے لیے کچھ نہیں کیابلکہ صرف اپنی دکان چلائی ہے۔ عارف چوہدری نے واضح کیا کہ کسی صورت بھی عدالت کی توہین کو برداشت نہیں کیا جائے گا۔انہوں نے کہا کہ فیصلہ آتے ہی مریم صفدر کا یہ کہنا کہ یہ کسی دباﺅ کا نتیجہ ہے، بہت ہی نامناسب بات ہے، لہذا اگر انہیں ایسا لگتا ہے تو اس شخص کا نام بھی بتائیں جس کے دباﺅپر عدالت نے ایسا کیا ہے۔خیال رہے کہ گذشتہ روز سپریم کورٹ نے سابق وزیراعظم نواز شریف کی جانب سے نااہلی کے فیصلے پر نظر ثانی کے لیے دائر کی گئی درخواست کا تفصیلی فیصلہ جاری کرتے ہوئے کہا تھا کہ ان سے متعلق حقائق غیر متنازع تھے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں