لاہور:: امیر جماعت اسلامی پاکستان سینیٹر سراج الحق نے کہاہے کہ امریکہ افغانستان میں امن سے زیادہ پاکستان میں بدامنی پھیلانے کی سازشوں میں مصروف ہے اسی لئے وہ بات بات پر بھارت کی خطے میں بالادستی قائم کرنے کی باتیں کرتاہے،پاکستانی قوم امریکہ و بھارت کی سازشوں کو کامیاب نہیں ہونے دیں گے، ہم بھارتی بالادستی کے امریکی خواب کو ایک ڈرائونا خواب بنانے کی صلاحیت رکھتے ہیں، بھارت اور امریکہ پاکستان کا کچھ نہیں بگاڑ سکتے، ملک کو اصل خطرہ آستینوں کے سانپوں سے ہے جو کھاتے پاکستان کا اور گن امریکہ کے گاتے ہیں، افغانستان میں بھارت کا کردار جلتی پر تیل ڈالنے والے کاہے، بھارت کو خطے کا تھانیدار نہیں مانتے، قومی یکجہتی اور اداروں کے درمیان باہمی اعتماد سے دشمن کے ناپاک عزائم کو خا ک میں ملایا جاسکتاہے مگر ہمارے حکمران امریکہ و بھارت کے غلام ہیں، حکمرانوں سے پوچھتاہوں کہ اقتدار کیلئے ان کے دلوں میں اتنی تڑپ کیوں ہے، یہ صرف اقتدار میں اس لئے آتے ہیں کہ عوام کا پیسہ لوٹ کر بیرونی بینکوں میں ڈال سکیں ۔
وہ جمعرات کو استنبول چوک مال روڈ پر اسلامی جمعیت طلبہ کے زیراہتمام طلبہ حقوق ریلی کی قیادت اور بعد ازاں طلبہ کنونشن سے خطاب کررہے تھے ۔ کنونشن سے ناظم اعلیٰ اسلامی جمعیت طلبہ صہیب کاکاخیل ، امیر جماعت اسلامی پنجاب میاں مقصود احمد ، لیاقت بلوچ ، ذکر اللہ مجاہد، حافظ سلمان بٹ و دیگر نے بھی خطاب کیا ۔ طلبہ ریلی میں لاہور کے تعلیمی اداروں کے ہزاروں طلبا نے شرکت کی ۔
سینیٹر سراج الحق نے کہاکہ نئی نسل کو ماہرین تعلیم کی ضرورت ہے، ماہرین کرپشن کی نہیں ۔ تھر اور اندرون سندھ میں بچے بھوک سے مر رہے ہیں جبکہ حکمرانوں کے پیسے گننے میں مشینیں بھی تھک جاتی ہیں ۔ حکمران کرپشن کر کے پوچھتے ہیںہمیں کیوں نکالا ۔ لاکھوں پڑھے لکھے نوجوان بے روزگار ی سے تنگ آ کر اپنی ڈگریاں جلانے پر مجبور ہیں ۔ پاکستان کرپشن اور بے روزگاری کی وجہ سے ترقی نہیں کر رہاہے ۔
اسلامی جمعیت طلبہ ملک کے اسلامی و نظریاتی تشخص کی محافظ ہے جس نے ہمیشہ ملک و قوم کے مفاد کے لیے ناقابل فراموش قربانیاں دیں ۔ ملک میں طلبا حقوق کی سب سے موثر آواز اسلامی جمعیت طلبہ ہے ۔دریں اثناسینیٹر سراج الحق نے اسلام آباد میں الخدمت رازی ہسپتال کی افتتاحی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ حکمرانوں کو امریکہ کی غلامی چھوڑنی ہی پڑے گی، امریکا کاایک نوکر بھی خود کو پاکستان آکر وائسرائے سمجھتا ہے،افسوس ہے کہ وزیر اعظم نے امریکا کے ایک آفسر کا والہانہ استقبال کیا۔
پاکستانی قوم کہتی ہے کہ بے غیرتی کی 100 سالہ زندگی سے غیرت کی ایک دن کی زندگی بہتر ہے، پاکستان وہ بدقسمت ملک ہے کہ دنیا میں تعلیم کے شعبے میں 163ویں نمبر پر ہے،افسوسناک بات یہ کہ پاکستانی حکومت ہر فرد پر تعلیم کے شعبے میں سالانہ 111روپے خرچ کرتی ہے،حکومت کی کرپشن کی وجہ سے کوئی ٹیکس بھی جمع نہیں کرتا، فلاحی اداروں کو کروڑوں روپے جمع ہوجاتے ہیں لیکن حکومت پر کوئی بھروسہ نہیں کرتا۔
ملک میں کرپشن کا بول بالا ہے ۔ پاکستان کو اللہ نے بے تحاشا نعمتوں سے نوازا ہے ، بدقسمتی سے ہم آئی ایم ایف کے غلام اور مقروض بن چکے ہیں۔سینیٹرسراج الحق نے کہا کہ پاکستان میں صحت کا شعبہ تباہ حالی کا شکار ہے ،غریب عوام کے لیے علاج کرانا مشکل ہو گیا ہے اور لاہور کے ہسپتالوں میں مائیں فرش پر بچے پید اکر رہی ہیں تو باقی ہسپتالوں کا تو اللہ ہی حافظ ہے ۔انہوں نے کہا الخدمت رازی ہسپتال سی بی آر ٹائون فیز ون میں غریب عوام کو علاج و معالجے کی مفت سہولت فراہم کی جائے گی۔ رازی ہسپتال ساٹھ بستروں پر مشتمل ہے اور مستقبل میں اس کو سو بستروں کا ہسپتال اور سٹیٹ آف دی آرٹ بنایا جائے گا۔ یہاں امراض قلب کا ایک ماڈل ہسپتال بنائیں گے اور گردوں کی پیوند کاری بھی کی جائے گی ۔

اپنا تبصرہ بھیجیں