اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک) پاکستان مسلم لیگ (ن) نے سابق وزیر اعظم نواز شریف کو باضابطہ طور پر دوبارہ پارٹی کا صدر منتخب کرنے کے لیے 2 اور 3 اکتوبر کو پارٹی کی جنرل کونسل کا اجلاس بلا لیا۔ مسلم لیگ (ن) کے مرکزی سیکریٹری جنرل مشاہد اللہ خان کا کہنا ہے کہ میاں نواز شریف پارٹی کے دوبارہ صدر منتخب ہونے تک لندن روانہ نہیں ہوں گے۔ان کا مزید کہنا تھا کہ پاکستان مسلم لیگ (ن) کی مرکزی مجلس عاملہاور جنرل کونسل کے علیحدہ علیحدہ اجلاس بلائے گئے ہیں جن میں پارٹی قیادت کو منتخب کرنے کے لیے 1600 اراکین
حق رائے دہی استعمال کریں گے۔ اس سے قبل یہ افواہیں گردش کر رہی تھیں کہ نواز شریف اپنی اہلیہ کلثوم نواز کی عیادت کے لیے جمعرات (28 ستمبر) کو لندن واپس روانہ ہو جائیں گے جو اس وقت کینسر کے علاج لیے لندن کے ایک نجی ہسپتال میں داخل ہیں۔ تاہم بیگم کلثوم نواز کی حالت اب بہتر ہے اور انہیں ہسپتال سے ڈسچارج کر دیا گیا ہے۔مشاہد اللہ خان کا کہنا ہے کہ بیگم کلثوم نواز کی حالت بہتر ہونے کے بعد اب میاں نواز شریف 3 اکتوبر سے قبل لندن روانہ نہیں ہوں گے۔ انہوں نے بتایا کہ 2 اکتوبر کو اسلام آباد کنونشن سینٹر میں پارٹی کی جنرل کونسل کا اجلاس منعقد کیا جائے گا جبکہ اس سے قبل پارٹی کی پارٹی آئین میں تبدیلی کے لیے مرکزی مجلس عاملہ کا اجلاس منعقد کیا جائے گا۔ان کا مزید کہنا تھا کہ پارٹی کی جنرل کونسل کے اجلاس کا دوسرا سیشن 3 اکتوبر کو منعقد کیا جائے گا جس میں پارٹی کے صدر کا انتخاب کیا جائے گا۔ مشاہد اللہ خان نے بتایا کہ نواز شریف کو پارٹی کی صدارت سے روکنے والے تمام عوامل کو ختم کر دیا جائے گا اور وہ 3 اکتوبر دوبارہ پارٹی کے صدر منتخب ہو جائیں گے۔ادھر الیکشن بل کی منظوری کے لئے قومی اسمبلی کا اجلاس 4 کے بجائے 2 اکتوبر کو طلب کر لیا گیا جہاں بل کی منظوری کے بعد اسی دن صدر ممنون حسین بل پر دستخط کریں گے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں