لاہور: وزیراعلیٰ پنجاب محمد شہبازشریف نے میانمار میں روہنگیا مسلمانوں پر بدترین ظلم و ستم اوران کی نسل کشی کی سخت الفاظ میں شدید مذمت کی ہے،وزیراعلیٰ محمد شہبازشریف نے عالمی برادری، مسلم دنیا اور اقوام متحدہ پرزوردیا ہے کہ میانمارمیں روہنگیا مسلمانوں پر ہونے والی بدترین زیادتیوں پر چشم پوشی کی بجائے مسئلے کے حل کیلئے میانمار حکومت پر دباؤ ڈالے۔
انہوں نے اپنے مذمتی بیان میں کہا کہ میانمار میں مسلمانوں کا قتل عام اقلیتوں کی بے دردی سے نسل کشی کی بدترین مثال ہے اورعصرحاضر میں ایسی بدترین نسل کشی کی کوئی دوسر ی مثال موجود نہیں۔وزیراعلیٰ محمد شہبازشریف نے ان خیالات کا اظہار لاہور سے لندن روانگی کے موقع پر کیا۔وزیراعلیٰ نے میانمار کے سنگین بحران کو روہنگیا مسلمانوں کے قتل عام کی سوچی سمجھی سازش قراردیتے ہوئے کہاکہ میانمار میں باقاعدہ منصوبہ بندی کے تحت مسلمانوں کی نسل کشی کی جارہی ہے جو کہ انتہائی قابل افسوس اور قابل مذمت ہے۔
انہوں نے کہا کہ مسلمان خواتین ، مردوں،خصوصاًبچوں پر ہونے والے ہولناک مظالم پر عالمی ضمیر کی خاموشی باعث تشویش ہے ،اس بدترین ظلم وستم کاسب سے زیادہ نشانہ معصوم بچے بنے ہیں جو کہ سب سے زیادہ متاثر ہوئے ہیں۔وزیراعلیٰ نے کہا کہ روہنگیا مسلمانوں کی نسل کشی روکنے کیلئے فوری طورپر کثیرالجہتی حکمت عملی اپنانے کی ضرورت ہے اوراس پر ایک لمحے کی تاخیر کے بغیر عملدرآمد ہونا چاہیے تاکہ بے گناہ مسلمانوں کا خون بہانے کایہ سفاکانہ سلسلہ فوری طورپر روکا جاسکے۔
وزیراعلیٰ نے عالمی برادری پر زوردیا کہ وہ فوری طورپر سفارتی کوششوں کو مزید تیز کرے اورمیانمار حکومت پر دباوٴ ڈالے کہ وہ روہنگیامسلمانوں کی حفاظت کیلئے کردار ادا کرتے ہوئے ضروری اقدامات اٹھائے۔انہوں نے کہاکہ میانمار کے مسلمانوں کی بدترین حالت زار انسانی حقوق کی بین الاقوامی تنظیموں اور مذہبی رہنماؤں کیلئے بھی بہت بڑا ٹیسٹ کیس ہے،جنہیں اس بات کو ہر صورت یقینی بنانا چاہیے کہ لوگوں کی نسل کشی کیلئے مذہب کا استعمال کسی طورپر جائز اوردرست نہیں۔
انہوں نے کہاکہ دنیا کا کوئی مذہب جبر و تشدد کی اجازت نہیں دیتا اور یہ وقت ہے کہ تمام مہذب دنیا بین المذاہب ہم آہنگی اور انسانی اقدار کی حفاظت کے لئے متحد ہو۔ انہوں نے کہا کہ انسانی حقوق مقدس ہیں اور ہمیں ان کی حفاظت اورتحفظ کیلئے اٹھ کھڑے ہونا چاہیے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں