بیجنگ (آئی این پی ) چین نے ایک ایسی ٹرین کی تیاری کا اعلان کیا ہے جو ڈھائی ہزار میل فی گھنٹہ کی رفتار سے سفر کرسکے گی۔چین کی چائنا ایرو اسپیس سائنس اینڈ ٹیکنالوجی کارپوریشن(سی اے ایس سی) نے اعلان کیا ہے کہ وہ ایسی ٹرینوں کی تیاری کی منصوبہ بندی کررہی ہےجو کہ ڈھائی ہزار میل فی گھنٹہ کی رفتار سے سفر کرسکیں گی۔یہ ٹرین اتنی تیز رفتار ہوگی کہ کراچی سے لاہور جتنا فاصلہ 786 میل سے زائد صرف 31 منٹ میں طے کرسکے گی۔چینی کارپوریشن کے مطابق سائنسدان مستقبل کی سپرفاسٹ ٹرینوں کی تیاری کا جائزہ لے رہے ہیں جو کہ ‘زمین پر اڑ’ سکیں گی۔یہ چینی کارپوریشن پہلے ہی چین کے لیے سیٹلائیٹس، راکٹ اور میزائل وغیرہ تیار کررہی ہے۔واضح رہے کہ اس وقت تیز ترین ٹرینوں کا سب سے بڑا نیٹ ورک چین میں موجود ہے اور گزشتہ دنوں ہی اس نے تیز ترین ٹرین (248 میل فی گھنٹہ کی رفتار کی سروس 21 ستمبر سے شروع کرنے کا اعلان کیا تھا۔سی اے ایس سی حکام کا کہنا تھا کہ وہ ڈھائی ہزار میل فی گھنٹہ کی رفتار سے چلنے والی ٹرینوں کی تیاری کے لیے مقامی اور بین الاقوامی سطح پر 20 سے زائد تحقیقی اداروں کے ساتھ مل کر کام کریں گے۔ہوسکتا ہے یہ ‘فلائنگ ٹرین’ جلد حقیقت کا روپ دھار لے، مگر چینی سائنسدان اس سے پہلے 600 میل فی گھنٹہ سے زائد رفتار سے دوڑنے والی ٹرین کے منصوبے کا اعلان کرچکے ہیں۔چین میں اب تک تیز ترین ٹرینوں کے لیے 20 ہزار کلومیٹر سے زائد ٹریک بچھایا جاچکا ہے اور 2020 تک اس میں مزید 10 ہزار کلومیٹر کے اضافے کا ہدف طے کیا گیا ہے۔واضح رہے کہ چین نے ان ٹرینوں کے لیے 360 ارب ڈالرز کا خرچہ کیا ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں