اسلام آباد (این این آئی)پی ٹی آئی کی جانب سے غلط دستاویز سپریم کورٹ میں جمع کرائے گئے ٗچاہتے ہیں کہ عدالت میں دودھ کا دودھ اور پانی کا پانی ہو جائے، فارن فنڈز کا معاملہ حساس ہے، عدالت نے اس ملک کو صحیح راستے پر لگانا ہے ٗ ملکی سلامتی کا سوال ہے، عدالت ، وزارت داخلہ اور نیب سے تحقیقات کی استدعا کررکھی ہے ٗحنیف عباسی کے وکیل کے دلائل،سپریم کورٹ کے چیف جسٹس میاں ثاقب نثار نے عمران خان کی نا اہلی اور ممنوعہ فنڈنگ کیس کی سماعت کے دور ان کہاہے کہپولیٹیکل پارٹیز آرڈر کی شق

ADVERTISEMENT

17 کی ذیلی شق 3 کے تحت ہر سیاسی جماعت فنڈز کی تفصیلات فراہم کرنے کی پابند ہے ٗ الیکشن کمیشن نے تحریک انصاف کو کلیئر قرار نہیں دیاجبکہ حنیف عباسی کے وکیل اکرم شیخ نے دلائل دیئے ہیں کہ پی ٹی آئی کی جانب سے غلط دستاویز سپریم کورٹ میں جمع کرائے گئے ٗچاہتے ہیں کہ عدالت میں دودھ کا دودھ اور پانی کا پانی ہو جائے، فارن فنڈز کا معاملہ حساس ہے عدالت نے اس ملک کو صحیح راستے پر لگانا ہے ٗ ملکی سلامتی کا سوال ہے، عدالت ، وزارت داخلہ اور نیب سے تحقیقات کی استدعا کررکھی ہے۔ پیرکو چیف جسٹس پاکستان کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے 3 رکنی بینچ نے پاکستان تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان نااہلی کیس کی سماعت کی۔سماعت شروع ہوئی تو چیف جسٹس میاں ثاقب نثار نے عمران خان کے وکیل سے استفسار کیا کہ امید کرتا ہوں انور منصور صاحب آپ کی طبیعت اب بہتر ہوگی جس پر وکیل عمران خان نے کہا کہ دستاویزات جمع کرائی ہیں تاہم زیادہ دیر کھڑا نہیں ہو سکتا ٗ تحریری معروضات میں سوالوں کے جواب دے چکا ہوں۔چیف جسٹس نے ریمارکس میں کہا کہ آپ کہتے ہیں الیکشن کمیشن ممنوعہ فنڈز پر فیصلہ نہیں دے سکتا جس پر انور منصور نے کہا کہ جی بالکل ٗالیکشن کمیشن یہ کیس نہیں سن سکتا ٗپولیٹیکل پارٹیز آرڈر 2002 میں پورا قانون تبدیل کر دیا گیا تھا ٗچیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ کیا آپ کا کہنا ہے اکاؤنٹ رپورٹ کے بعد الیکشن کمیشن اکاؤنٹس نہیں دیکھ سکتا جس پر انور منصور نے کہا کہ میرا موقف ہے رپورٹ جمع کروانے کے بعد آڈٹ نہیں کرا سکتے۔چیف جسٹس نے ریمارکس دئیے کہ قانون کے مطابق ہر سیاسی جماعت فنڈنگ ذرائع بتانے کی پابند ہے جس پر انور منصور نے کہا کہ میں یہ نہیں کہہ رہا میں جوابدہ نہیں ہوں، عمر عطا بندیال نے ریمارکس دیے کہ آپ کے مطابق ہر جماعت کے چارٹرڈ اکاؤنٹنٹ کا جواب حتمی ہے، جبکہ الیکشن کمیشن آپ کو سنے بغیر فیصلہ نہیں کریگا۔انور منصور نے کہا کہ صرف ایک سیاسی جماعت کو نہ چنا جائے جس پر جسٹس فیصل عرب نے کہا کہ قانون کے مطابق آپ یہ نہیں کہہ سکتے کہ صرف مجھے سزا نہ دیں ٗآپ اپنے موقف سے خود کو الزام سے صاف کریں۔الیکشن کمیشن کے وکیل نے کہا کہ میرے جواب پر اعتراض سے پہلے وکیل انورمنصور پورا پیرا پڑھیں جبکہ بدنیتی اور فراڈ پر مبنی جواب پر الیکشن کمیشن معاملہ کو دیکھ سکتا ہے ٗ چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ الیکشن کمیشن نے عمومی بات کی ہے کسی کو منسوب نہیں کیا۔وکیل انور منصور نے کہا کہ عدالت جواب کو شروع سے پڑھے تو فراڈ کا لفظ پی ٹی آئی کیلئے استعمال کیا جس پر جسٹس عمر عطا بندیال نے ریمارکس دیے کہ الیکشن کمیشن کو اکاؤنٹ کی جانچ کا حق حاصل ہے، الیکشن کمیشن اکاؤنٹینٹ کی رپورٹس کو قبول اور مسترد کر سکتاہے اور کیا اگر چند سال بعد الیکشن کمیشن کو پتہ چلے تو وہ اس کو نظر انداز کر دیگا ٗ فارن فنڈنگ کی معلومات تو دوسرے ذرائع سے آئیگی۔وکیل عمران خان انور منصور نے اپنے دلائل میں کہا کہ تمام سیاسی جماعتیں یہی کررہی ہیں،جس پر چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ اگرعمران خان کا ڈکلیئریشن غلط نکلے اور ہم معاملہ الیکشن کمیشن بھیجیں تو آپ کی قیادت کا کیا موقف ہوگا ٗانور منصور نے کہا کہ عدالت اس معاملے پر کمیشن بنا سکتی ہے جس پر چیف جسٹس نے استفسار کیا کہ ایک ادارے کو چھوڑ کر کمیشن کیوں بنانا چاہیے؟انور منصور نے کہا کہ سیاسی جماعت کے نجی اکاؤنٹس کی تشہیر نہیں کی جاسکتی جس پر جسٹس فیصل عرب نے ریمارکس دیے کہ سیاسی جماعت کے اکاؤنٹس نجی کیسے ہو سکتے ہیں؟جسٹس عمر عطا بندیال نے ریمارکس دیے کہ کیا قانون میں لکھا ہے کہ اراکین پارلیمنٹ کے اثاثے ظاہر کئے جائیں جس پر وکیل عمران خان نے کہا کہ قانون میں ایسا نہیں لکھا جسٹس عمر عطابندیال نے کہا کہ ہر سال الیکشن کمیشن ان کی شفافیت کو مد نظر رکھ کر پبلک کرتا ہے ٗچیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ ہر سیاسی جماعت نے اپنا حساب دینا ہے اور یہ حساب الیکشن کمیشن نے لینا ہے جس پر انور منصور نے کہا کہ حساب تو سب نے دیناہے۔جسٹس فیصل عرب نے ریمارکس دیے کہ اگر آپ سے فارن فنڈنگ کا پوچھا جائے تو کیا اس کو آڈٹ کہا جائیگا جس پر انور منصور نے کہا کہ میرا کہنا ہے آڈٹ انکوائری میں نہیں کیا جاسکتا ٗچیف جسٹس نے ریمارکس دئیے کہ اگر آڈٹ نہیں کریں گے تو آمدن اور اخراجات ہی رہ جاتا ہے جبکہ کسی دوسری سیاسی جماعت کا کیس آیا تو اس کو بھی دیکھیں گے تاہم دیکھنا ہے کہ کیا پی ٹی آئی نے ممنوعہ فنڈز لیے ہیں اور اگر فنڈز ممنوعہ ہیں تو کارروائی کون کریگا؟حنیف عباسی کے وکیل اکرم شیخ نے کہا کہ پی ٹی آئی کی جانب سے غلط دستاویز سپریم کورٹ میں جمع کرائے گئے، یہ دستاویزات انہوں نے خود تیار کیے اور اس جواب میں ایک بھی دستاویز درست نہیں ٗفارن فنڈنگ پر جمع کرائی گئی دستاویز کا ہر صفحہ خود تیار کیا گیا۔ ان کا کہنا تھا کہ پی ٹی آئی نے اصل فنڈز سے کم فنڈز ظاہر کیے اور کہا گیا ہے کہ حلال کو حرام سے الگ کردیا ہے، حرام انتظامی طور پر خرچ کیا گیا اور حلال پاکستان بھیجنے کا موقف دیا گیا۔جسٹس عمر عطا بندیال نے ریمارکس دیے کہ حرام نہیں ممنوعہ کا لفظ ہے ٗوکیل عمران خان انور منصور نے کہا کہ ان کا کہنا تھا کہ میں امریکہ دستاویز بنانے گیا تھا جس پر اکرم شیخ کا کہنا تھا کہ میں نے آپ کے بارے میں ایسا نہیں کہا۔چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ ان دستاویز کو دیکھنے میں مہینے لگ جائیں گے ٗاکرم شیخ نے کہا کہ جناب کی عقابی نظریں ایسی دستاویز کو ریکارڈ کا حصہ بننے کی اجازت نہیں دینگی جبکہ میرا کہنا ہے کہ پی ٹی آئی نے خود ساختہ دستاویزات لگائی ہیں،چیف جسٹس نے استفسار کیا کہ کیا جو بھی فنڈز ہیں وہ فارا کو اس کی معلومات دیتے تھے جس پر اکرم شیخ نے کہا کہ قانون کے مطابق فارا کو تمام معلومات دینا ہوتی ہیں، ہم نے ریکارڈ پرموجود ایک ایک نام کا جائزہ لیا وہ فارا ریکارڈ پر نہیں۔چیف جسٹس نے استفسار کیا کہ انور منصور صاحب کیا درست ہے کہ تمام تفصیلات فارا کی ویب سائٹ پر ظاہر ہونی چاہیے جس پر انور منصور نے کہا کہ 50 ڈالر سے کم معلومات فارا کی ویب سائٹ پر نہیں دی جاتی، عدالت میں وہ لسٹ جمع کرائی ہے جو رقم پاکستان آئی ہے۔وکیل حنیف عباسی نے کہا کہ چاہتے ہیں کہ عدالت میں دودھ کا دودھ اور پانی کا پانی ہو جائے، فارن فنڈز کا معاملہ حساس ہے جبکہ عدالت نے اس ملک کو صحیح راستے پر لگانا ہے۔چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ ہمیں ذمہ داریوں کا احساس ہے اور اس کو قانون کے مطابق ادا کریں گے ٗ اکرم شیخ نے کہا کہ ملکی سلامتی کا سوال ہے، عدالت ، وزارت داخلہ اور نیب سے تحقیقات کی استدعا کررکھی ہے، عمران خان نے بادی النظر میں غلط ڈکلیئریشن الیکشن کمیشن میں جمع کرائے،جو دستاویزات خود ساختہ جمع کروائی گئیں ان کے نتائج عدالت جانتی ہے۔چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ کیا ہم فارا کو معلومات نہ دینے پر اس ریکارڈ کو بوگس کہہ دیں جس پر اکرم شیخ نے کہا کہ 100 فیصد یہ دستاویزات گمراہ کن اور جعلی ہیں۔ جسٹس عمر عطا بندیال نے استفسار کیا کہ ان کا کہنا ہے قابل اعتراض فنڈز باہر خرچ کیے ٗپاکستان میں آنے والے فنڈز جائز ہیں، کیا انکا یہ موقف درست ہے۔ جسٹس فیصل عرب نے ریمارکس دیے کہ آپ جماعت پر پابندی مانگ رہے ہیں اور نہ ہی فنڈز ضبطگی جس پر اکرم شیخ نے کہا کہ عدالت کے سامنے مختصر کیس لایا ہوں،عدالت کیس کیلئے کافی و شافی ہے جبکہ میں صرف عمران خان کی نااہلی مانگ رہا ہوں ٗپہلے دی گئی دستاویز میں 3 لاکھ 5 ہزار ڈالر وصولی قبول کی اور اب 94 ہزار ڈالر بھیجنے کا کہا گیا ہے،پی ٹی آئی کی جمع کردہ لسٹ میں پہلے اقلیتی کا نام شامل تھا اب نہیں۔جسٹس عمر عطا بندیال نے ریمارکس دیے کہ جو ممنوعہ فنڈز اکٹھے کئے گئے تھے وہ پی ٹی آئی کے لئے حاصل کئے گئے، ان ممنوعہ فنڈز کا کیا کیا گیا جس پر انور منصور نے کہا کہ ان ممنوعہ فنڈز کے بارے میں عمران خان نہیں جانتے۔اکرم شیخ نے دلائل میں کہا کہ عمران خان کا کہنا ہے کہ پاکستان صرف پاک فنڈز بھیجے گئے، عمران خان نے الیکشن کمیشن میں سرٹیفکیٹ دیا کہ اس نے کوئی ممنوعہ فنڈز نہیں لئے۔چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ اس حقیقت کو جاننے کیلئے ممنوعہ فنڈز کی تحقیقات کی ضرورت ہوگی جس پر اکرم شیخ نے کہا کہ تحقیقات کس چیز کی جناب، اعتراف تو یہ خود کررہے ہیں، چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ عمران خان کی عدم موجودگی میں ممنوعہ فنڈ ریزنگ ہوئی تو عمران کے سرٹیفکیٹ کو کیسے غلط قرار دیں۔عدالت نے عمران خان نااہلی کیس کی سماعت(آج) منگل کو ساڑھے گیارہ بجے تک ملتوی کردی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں